آسٹریلین پارلیمنٹ کی خاتون اسٹاف کے ساتھ زیادتی، وزیراعظم نے معافی مانگ لی

آسٹریلین پارلیمنٹ کی خاتون اسٹاف نے انکشاف کیا ہے کہ 2019 میں انہیں وزیر دفاع لِنڈا رینلڈزکے آفس میں جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا تھا اور زبان کھولنے پر ملازمت سے نکالنے کرنے کی دھمکی دی گئی تھی۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق اس بات کا انکشاف خاتون اسٹاف برٹنی ہیگنس نے پارلیمنٹ میں ملازمین کے ساتھ ناروا سلوک سے متعلق ایک کمیٹی کے اجلاس میں کیا تھا جس کی رپورٹ منظر عام پر آچکی ہیں۔برٹنی ہیگنس نے اپنے ساتھ ہونیوالا یہ واقعہ سرکاری ملازمت کو خیرباد کہنے کے بعد بیان کیا ہے۔

اے بی سی نیوز سے بات کرتے ہوئے پارلیمنٹ میں جونیئر عملے کی حیثیت سے فرائض سرانجام دینے والی برٹنی ہیگنس نے بتایا کہ 2019 میں اس وقت کی وزیردفاع لِنڈا رینولڈز کے کمرے میں سینیئر ملازم نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا جو وزیر اعظم کی سیاسی جماعت لبرل پارٹی کے لیے بھی کام کرتا تھا۔

متاثرہ خاتون کا مزید کہنا تھا کہ اُس وقت میرے سامنے دو آپشنز رکھے گئے تھے یا تو خاموشی رہ کر ملازمت جاری رکھوں۔ اگر میں نے زبان کھولی تو مجھے نوکری سے نکال دیا جائے گا۔ ملازمت میری مجبوری تھی، مجھے اپنے کیرئیر کی فکر تھی اسلئے خاموش رہی۔

خاتون کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے اپریل 2019 میں پولیس سے بات کی لیکن باضابطہ طور پر شکایت درج نہیں کروائی تھی کیونکہ اسے اپنے کیریئر کی فکر تھی۔

برٹنی ہیگنس کا معاملہ منظر عام پر آنے کے بعد لنڈا رینولڈ نے واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ہیگنس سے معافی مانگی اور کہا کہ اتنی بڑی بات ہوگئی اور وہ بے خبر رہیں تاہم اب وہ انصاف کی فراہمی کے لیے سخت ایکشن لیں گی۔

دوسری جانب آسٹریلیا کے وزیر اعظم اسکاٹ موریسن نے ملک کی پارلیمنٹ میں ایک خاتون سے مبینہ جنسی زیادتی کے معاملے پر معافی مانگی ہے۔

آسٹریلوی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ زیادتی کا شکار خاتون اسٹاف کو انصاف کی فراہمی کی یقین دہانی کراتے ہیں اور پارلیمنٹ میں خاتون ملازمین کے تحفظ کے لیے ضروری اقدامات بروئے کار لائے جائیں گے۔

The post آسٹریلین پارلیمنٹ کی خاتون اسٹاف کے ساتھ زیادتی، وزیراعظم نے معافی مانگ لی appeared first on Siasat.pk Urdu News – Latest Pakistani News around the clock.

%d bloggers like this: