بتایا جائے حب الوطنی کا سرٹیفیکیٹ کہاں سے ملتا ہے؟ مجھے بھی اپلائی کرنا ہے: شاہد خاقان عباسی

پاکستان مسلم لیگ کے سینئر رہنماء اور سابق وزیر اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ انہیں بتایا جائے کہ حب الوطنی کا سرٹیفیکیٹ کہاں سے ملتا ہے؟ وہ سابق وزیر اعظم ہوتے ہوئے بھی اپلائی کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے پہلے غداری کا مقدمہ بنوایا اب کہہ رہی ہے کہ اسکا اس سے کوئی تعلق نہیں جبکہ مدعی کا تحریک انصاف سے تعلق سامنے آ چکا ہے۔ انہوں نے حکومت کو کھل کر اس کیس میں فریق بننے کو کہا۔ انکا کہنا تھا کہ غدار اور بھارتی ایجنٹ کہنے والے سب لوگ غائب ہیں۔ اب نئی کہانی سامنے آئی ہے کہ حکومت کے علم میں نہیں کہ پرچہ کس نے درج کروایا۔ انہوں نے وزراء اور وزیر اعظم کو مقدمے میں فریق بننے کا چیلنج دیتے ہوئے کہا کہ وہ گرفتاریاں عمل میں لائیں اور عوامی عدالت میں مقدمہ چلائیں تا کہ ثابت ہو سکے کہ کون غدار ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انکا کہنا تھا کہ وزیراعظم کو پتہ ہی نہیں کہ سابق وزیراعظم پر مقدمہ کس نے بنوایا ، انہیں یہ بھی نہیں پتہ کہ معیشیت تباہ ہو چکی ہے، انہیں یہ نہیں پتہ کہ اتنی مہنگائی ہوچکی ہے اور نا انہیں پتہ ہے کہ آٹا اور چینی چور کون ہیں۔ انہوں نے دو سال میں اتنے قرض لئے جتنے پاکستان نے پچھلے دس سال میں نہیں لئے۔ انکا کہنا تھا کہ تمام وزراء غداری کے فتوے لگاتے ہیں مگر عوام کے مسائل پر کوئی بات نہیں، میرا حکومت کو کھلا چیلنج ہے کہ غداری کا مقدمہ کھلی عدالت میں چلائیں اور حقائق کے ذریعے عوام کو بتائیں کہ کون غدار ہے۔

%d bloggers like this: