بریکنگ نیوز: پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالنے یا نہ نکالنے کا فیصلہ کب ہونے والا ہے؟ تازہ ترین خبر

اسلام آباد (ویب ڈیسک) فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا ورچوئل اجلاس 21 سے 23 اکتوبر تک ہوگا، جس میں پاکستان کوگرے لسٹ سے نکالنے کا فیصلہ ہوگا۔ ذرایع کا کہنا ہے کہ ایف اے ٹی ایف پلانری اجلاس جون میں ہونا تھا تاہم کرونا وبا کے باعث عالمی ادارے کے جائزے اور ڈیڈ لائنز


ملتوی کر دی گئی تھیں، اب اس کا ورچوئل اجلاس اکیس سے تئیس اکتوبر تک ہوگا۔ ذرایع کے مطابق ایف اے ٹی ایف اجلاس میں پاکستان کوگرے لسٹ سے نکالنے کا فیصلہ ہوگا ، منی لانڈرنگ اور بد امنی پھیلانے والوں کی مالی معاونت پر کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔ یاد رہے کہ پاکستان کو ایف اے ٹی ایف شرائط پوری کرنے کے لیے مزید 4 ماہ کاوقت ملا تھا، گزشتہ اجلاس تک پاکستان 27 نکاتی ایکشن پلان میں سے 14 پر عمل درآمد کر چکا تھا، ذرایع کا کہنا ہے کہ جائزہ گروپ کو بقیہ 13 نکات پر تعمیل کی تفصیل جمع کرائی جا چکی ہے۔ پاکستان کو گرے لسٹ سے نہ بھی نکالا گیا تو 10 نکات پر مزید عمل درآمد کے لیے کہا جائے گا، یہ بھی یاد رہے کہ پاکستان کو جون 2018 میں اسٹریٹجک خامیوں پر گرے لسٹ میں شامل کیاگیا تھا۔ یکم اکتوبر کو حکومت پاکستان نے ایف اے ٹی ایف کی شرط پر عمل درآمد کرتے ہوئے کالعدم تنظیموں اور ان سے منسلک افراد کی نشان دہی کے لیے ایک سپروائزری بورڈ تشکیل دیا تھا، یہ بورڈ نیشنل سیونگ رولز کی خلاف ورزی پر ایکشن لے گا، منی لانڈرنگ اور بد امنی کے لیے فنڈز جمع کرنے سے روکے گا۔ بورڈ قومی بچت اسکیموں میں مشکوک سرمایہ کاری کو بحق سرکار ضبط کر لے گا، بچت اسکیموں میں مشکوک سرمایہ کاری میں ملوث افراد کے خلاف بھی کارروائی کی جائے گی۔







%d bloggers like this: