جنسی ہراسانی: مودی سرکار کے سابق وزیر خاتون صحافی کے خلاف مقدمہ ہار گئے

سابق بھارتی وفاقی وزیر ایم جے اکبر صحافی خاتون کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ ہار گئے۔

بھارتی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق 15 اکتوبر 2018 کو صحافی خاتون پریا رامانی پر جنسی ہراسانی کے جھوٹے الزامات لگانے پر ہتک عزت کا کریمنل مقدمہ دائر کرنے والے سابق بھارتی وفاقی وزیر مبشر جاوید اکبر مقدمہ ہار گئے ہیں اور عدالت نے اپنا فیصلہ سناتے ہوئے جنسی ہراسانی کے الزامات عائد کرنے والی صحافی خاتون کو مقدمے سے باعزت بری کردیا۔

جنسی ہراسانی کے الزامات لگانے پر مبشر جاوید اکبر کا صحافی خاتون کے خلاف مقدمہ درج کرواتے ہوئے کہنا تھا کہ صحافی خاتون کی جانب سے ان پر جھوٹے الزامات عائد کیے گئے ہیں جس کی وجہ سے ان کی شہرت داغدار ہوئی اور سیاست کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا ہے۔

اکتوبر 2018 میں بھارتی خاتون صحافی پریا رامانی نے سابق وفاقی وزیر مبشر جاوید پر جنسی طور پر ہراساں کرنے کا الزام عائد کیا تھا، اور انہوں نے جنسی ہراسانی کا واقعہ 2017 میں فیشن میگزین ووگ میں شائع کیا تھا لیکن اس میں انہوں نے ایم جے اکبر کا نام نہیں لکھا تھا۔

بھارتی صحافی خاتون پریا رامانی نے فیشن میگزین ووگ میں شائع ہونے والے مضمون میں یہ دعوی کیا تھا کہ مبشر جاوید اکبر نے 1994 میں 23 سال کی عمر میں انہیں جنسی طور پر ہراساں کیا تھا، اس وقت مبشر جاوید اکبر ایک میگزین کے ایڈیٹر کے طور پر کام کر رہے تھے اور وہ نوکری کے لیے انہیں انٹرویو دینے کے لئے گئیں تھی، جہاں انہوں نے مجھے جنسی ہراسانی کا نشانہ بنایا تھا۔

The post جنسی ہراسانی: مودی سرکار کے سابق وزیر خاتون صحافی کے خلاف مقدمہ ہار گئے appeared first on Siasat.pk Urdu News – Latest Pakistani News around the clock.

%d bloggers like this: