حکومت کا احسن اقدام:کورونا ہسپتالوں کو اب بجلی کی فراہمی کہاں سے ممکن ہو گی؟شاندار فیصلہ کر لیا گیا

کراچی(ویب ڈیسک)صوبائی وزیر برائے توانائی امتیاز شیخ نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے بجلی کی قلت اور بحران سے نکلنے کے لیے کورونا سینٹرز کو سولرائز کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سندھ کے وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ اور عالمی بینک کے افسران نے ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس کا انعقاد کیا، جس میں عالمی



بینک کی معاونت سے سندھ میں جاری شمسی توانائی کے منصوبوں پر پیشرفت اور عملدرآمد کی رفتار کا جائزہ لیا گیا۔اس موقع پر وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نے ضلع جامشورو میں 560 میگا واٹ اور گھارو کے ضلع ٹھٹہ میں 330 میگاواٹ کے دو سولر پارک بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔ اُن کا کہنا تھا کہ ’ان پارکوں کی تعمیر سے بجلی کی شدید قلت اور بحران پر قابو پانا ممکن ہوگا‘۔ امتیاز احمد شیخ نے عالمی بینک کے افسران کو بتایا کہ ’سندھ حکومت نے پہلے مرحلے میں مختلف اسپتالوں میں قائم کرونا سینٹرز کو شمسی توانائی کے ذریعے بجلی فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے‘۔انہوں نے بتایا کہ ’پہلے مرحلے میں صوبے کے مختلف اضلاع میں موجود 29 اسپتالوں کو شمسی بجلی پر تبدیل کیا جائے گا، جس پر1.2 ارب روپے لاگت آئے گی، یہ منصوبہ مارچ 2021 تک مکمل ہوجائے گا‘۔امتیاز شیخ کا کہنا تھا کہ ’اگلے مرحلے میں صوبے میں قائم دیگر اسپتالوں کو بھی سولرائز کیا جائے گا‘۔اجلاس میں سندھ کے دور دراز اضلاع کے دو لاکھ غریب گھروں کو سستی قیمت پر شمسی بجلی فراہم کرنے کے منصوبوں پر گتفگو اور کام کی رفتار کو تیز کرنے پر بھی تبادلۂ خیال کیا گیا۔اجلاس میں عالمی بینک کے سینئر انرجی اسپیشلسٹ اولیور نائٹ Oliver Knight، صدر انجم احمد اور دیگر افسران موجود تھے۔ملک بھر میں کورونا کی دوسرہ لہر آنے کے بعد کیسز میں مزید اضافہ ہو گیا ہے۔اس وبا کے باعث اب تک ریکارڈ اموات میں بھی اضافہ ہوا ہے ۔حکومت نے ماسک پہننا لازمی قرار دیا ہے۔







%d bloggers like this: