راجہ ظفر الحق کی سیاست ہمیشہ کے لیے دفن! سینیٹ ٹکٹ نہ دینے کے بعد وہ خواہش جسے (ن)لیگ نے پورا ہی نہ کیا

<!– –>

<!–

(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({});
–> <!–

googletag.cmd.push(function() { googletag.display(‘div-gpt-ad-1518176776442-0’); });

–>
<!–

googletag.cmd.push(function() { googletag.display(‘div-gpt-ad-1518766058477-0’); });

–>

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) مسلم لیگ ن نے سینیٹ انتخابات میں اپنے پارٹی چئیرمین کی ہی پارلیمانی سیاست ختم کر دی۔



 تفصیلات کے مطابق سینیٹ انتخابات میں ٹکٹس کے معاملے پر اختلافات کُھل کر سامنے آ گئے ہیں پھر چاہے وہ مسلم لیگ ن ہو ، پیپلز پارٹی یا پھر حکومتی جماعت پاکستان تحریک انصاف۔ حال ہی میں پی ٹی آئی کے بعد اب مسلم لیگ ن میں بھی سینیٹ انتخابات کے لیے ٹکٹس کی تقسیم کے معاملے پر اختلافات سامنے آ گئے ہیں جبکہ مسلم لیگ ن نے پارٹی چئیرمین کی پارلیمانی سیاست کو ہی ختم کر دیا ہے۔


پارٹی چئیرمین راجہ ظفر الحق نے سینیٹ کا ٹکٹ مانگا تو شاہد خاقان عباسی نے اس کی مخالفت کر دی۔ اس حوالے سے ذرائع نے بتایا کہ سیاست اور سیاسی اقدار تبدیل ہوچکے ہیں اور اب کی سیاست میں راجہ ظفرالحق کی جگہ تصور نہیں کی جا رہی۔


یہی وجہ ہے کہ ‏ظفرالحق نے اپنے بیٹے محمدعلی راجہ کے لیے سینیٹ ٹکٹ مانگا لیکن انہیں نہیں دیا گیا۔ ذرائع نے بتایا کہ سینئر لیگی رہنما نے راجہ ظفرالحق کی عمر کی وجہ سے ان کی مخالفت کی۔

مسلم لیگ ن نے پارٹی چئیرمین کو ہی سینیٹ کا ٹکٹ الاٹ نہیں کیا جس پر چہ مگوئیاں ہو رہی ہیں۔ جبکہ ‏‏محمد زبیربھی سینیٹ سیٹ سے محروم ہوگئے۔ پارٹی چئیرمین ایک آئینی عہدہ ہے اور آئینی عہدہ رکھنے والے کو ہی پارلیمانی سیاست سے محروم کر دینا حیرت انگیز ہے۔






<!–

–>


%d bloggers like this: