رواں سال ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے پاکستان کیسے نکل سکتا ہے؟

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) دہشتگردوں کی مالی معاونت روکنے کے لیے اقدامات کرنے والا عالمی ادارہ ہے جس نے پاکستان کو اپنی گرے لسٹ میں ڈال رکھا ہے جس سے نکلنے کے لیے پاکستان بھرپور کوشش کر رہا ہے۔

رواں سال بھی ایف اے ٹی ایف کے سالانہ اجلاس سے قبل پاکستان فیٹف کے رکن ممالک سے رابطے بڑھا رہا ہے تاکہ ادارے کی گرے لسٹ سے نکلنے کیلئے ارکان ممالک کی حمایت حاصل کی جا سکے۔ امسال فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا سالانہ 4 روزہ اجلاس 22 فروری سے آن لائن شروع ہو گا۔

اس اجلاس میں فیصلہ کیا جائے گا کہ پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالا جائے گا یا نہیں۔ اس حوالے سے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی حکومتی اقدامات اور فیٹف شرائط پر عملدرآمد کی وجہ سے پرُامید ہیں مگر اجلاس میں منظوری کے بعد بھی جون2021 تک پاکستان گرے لسٹ میں ہی رہے گا۔

اسی مقصد کے لیے پاکستان فیٹف کے رکن ممالک سے تعلقات کو فروغ دینے کے لیے رابطے بڑھا رہا ہے۔ اس حوالے سے دفترخارجہ کے ایک عہدیدار نے کہا ہے کہ اگر اجلاس میں ایف اے ٹی ایف جائزہ دورے کے لیے رضامندی ظاہر کرتا ہے تو جون تک پاکستان گرے لسٹ سے نکل جائے گا۔

پاکستان کی جانب سے کوشش جاری ہے کہ رکن ممالک کے سفارتکاروں کو فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے 27 نکاتی ایکشن پلان پر عملدرآمد پر بریفنگ دے کر ان کی حمایت حاصل کی جائے تاکہ اجلاس سے قبل ہی معاملات کو احسن انداز میں حل کرنے میں مدد مل سکے۔

The post رواں سال ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے پاکستان کیسے نکل سکتا ہے؟ appeared first on Siasat.pk Urdu News – Latest Pakistani News around the clock.

%d bloggers like this: