علامہ خادم حسین رضوی جب زندہ تھے تو انکی تقریر ٹی وی پر نہیں دکھائی جاتی تھی اور اب۔۔۔حامد میر نے معاشرے اور میڈیا کی منافقت سے پردہ اٹھا دیا

اسلام آباد،لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک، این این آئی)تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کی نماز جنازہ کو لاہور کی تاریخ کا سب سے بڑا نماز جنازہ کا اجتماع قرار دے دیا گیا ، سینئر صحافی حامد میر کہتے ہیں کہ یہ معاشرے اور میڈیا کی منافقت کا جنازہ بھی ہے۔تفصیلات کے مطابق سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر معروف صحافی و تجزیہ کار حامد میر نے لکھا کہ علامہ خادم حسین رضوی چند روز پہلے تک زندہ تھے تو انکی تقریر اور جلسہ ٹی وی پر بھی نہیں دکھایا جا سکتا تھا لیکن اب وہ دنیا سے چلے

گئے تو صدر مملکت سے لے کر کالعدم تحریک طالبان پاکستان تک سب نے تعزیت کر دی۔انہوں نے کہا کہ اب علامہ خادم حسین رضوی کے جنازے کی خبریں بھی ٹی وی چینلز دکھا رہے ہیں یہ دراصل معاشرے اور میڈیا کی منافقت کا جنازہ ہے۔اینکر پرسن مبشر لقمان نے اپنے ٹوئٹ میں لکھا مجھے بتایا گیا ہے کہ اب تک لاکھوں لوگ نماز جنازہ کے لیے جمع ہوچکے ہیں ، میں نہیں جانتا کہ لوگوں کی گنتی کا پیمانہ کیا ہے لیکن یقینا یہ لاہور کی تاریخ میں سب سے بڑا نماز جنازہ کا اجتماع ہے۔دریں اثناتحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی کے نماز جنازہ میں ملک بھر سے کارکنوں اور عقیدت مندوں کی، کثیر تعداد میں شرکت کے باعث صوبائی دارالحکومتلاہورمیں سکیورٹی کے غیر معمولی انتظامات کئے گئے۔ کیپٹل سٹی پولیس چیف محمد عمر شیخ کی ہدایت پر شہر بھر میں سکیورٹی کوہائی الرٹ رکھا گیا ، شہر کے داخلی و خارجی راستوں پر سکیورٹی بڑھا دی گئی اور گاڑیوں کی چیکنگ کو مزید سخت کر دیا گیا۔ مینار پاکستان کےگردونواح میں پولیس کی بھاری نفری تعینات رہی ۔ محمد عمر شیخ کی ہدایت پر ڈولفن و پیرو اور پٹرولنگ گاڑیاں موونگ پوزیشن میں رہیں۔سی سی پی او کی ہدایت پر تمام ڈویژنل آپریشنل افسران فیلڈ میں موجود رہے اور سکیورٹی انتظامات کی نگرانی کرتے رہے ۔ نماز جناز ہ میں لوگوں کی غیر معمولی تعداد میںشرکت کے باعث سیف سٹی کیمروں کی مدد سے بھی سکیورٹی کو یقینی بنایا گیا ۔

Leave a Reply

%d bloggers like this: