لاہور ہائیکورٹ نے ترین اور شریف فیملی کی شوگر ملز انکوائریز کو کالعدم قرار دے دیا

لاہور ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے پی ٹی آئی کے رہنما جہانگیر ترین اور شریف فیملی کی شوگر ملز کی درخواستوں پر محفوظ فیصلہ سنا دیا، لاہور ہائی کورٹ کے دو رکنی بینچ نے اپنے فیصلے میں جہانگیر ترین اور شریف فیملی کی شوگر ملز انکوائری کو کالعدم قرار دے دیا، درخواستوں میں شوگر کمیشن رپورٹ کی روشنی میں ایف آئی اے کی تحقیقات کو چیلنج کیا گیا تھا۔

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس شاہد کریم اور جسٹس ساجد محمود سیٹھی پر مشتمل 2 رکنی بنچ نے دو ملز کو ایس ای سی پی کی جانب سے جاری نوٹس کالعدم قرار دیتے ہوئے اپنے فیصلے میں کہا کہ ایس ای سی پی اپنا کردار قانون کے مطابق ادا کرنے میں ناکام رہا، ایف آئی اے کی انکوائری بدنیتی پر مبنی ہے۔

لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بنچ نے فیصلے میں قرار دیا کہ ایف آئی اے کو انکوائری کا اختیار ہے لیکن دیکھنا یہ ہے کہ انکوائری کن قوانین کے تحت کی جا سکتی ہے، ایف آئی اے کے اختیارات بارے وضاحت تفصیلی فیصلے میں کی جائے گی۔

درخواست گزاروں کی جانب سے درخواستوں میں نقطہ اٹھایا گیا تھا کہ ایسے معاملات میں ایف آئی اے کو انکوائری کا اختیار نہیں ہے، درخواست گزاروں کے وکیل سلمان اکرم راجہ اور سلمان اسلم بٹ نے عدالت سے درخواستوں میں استدعا کی تھی کہ عدالت جےآئی ٹی کے العریبیہ شوگر ملز سے ریکارڈ طلبی کے نوٹس کو غیر قانونی قرار دے۔

درخواست گزاروں کی جانب سے عدالت سے استدعا کی گئی تھی کہ عدالت العریبیہ شوگر ملز اور فاروقی پلپ ملز کے خلاف وفاقی حکومت کے انکوائری کے احکامات کو کالعدم قرار دے اور انہیں ہراساں کرنے سے روکتے ہوئے جاری طلبی کے نوٹسز معطل کئے جائیں۔

بعد ازاں لاہور ہائی کورٹ نے اپنا محفوظ کیا گیا فیصلہ سناتے ہوئے جہانگیر ترین اور شریف فیملی کی شوگر ملز کے خلاف کارروائی کی درخواستیں جزوی طور پر منظور کر لیں۔

The post لاہور ہائیکورٹ نے ترین اور شریف فیملی کی شوگر ملز انکوائریز کو کالعدم قرار دے دیا appeared first on Siasat.pk Urdu News – Latest Pakistani News around the clock.

%d bloggers like this: