مولانا فضل الرحمان نے عورت کی حکمرانی کیخلاف فتویٰ دیا تھا آج ایک عورت کیساتھ مل کر ’’جہاد‘‘کر رہے ہیں ، کیا پی ڈی ایم تحریک کا حصہ نہ بننا گناہ کبیرہ ہے؟اندرون خانہ دراصل کیا چل رہا ہے؟ حیران کن انکشافات

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )نجی ٹی وی پروگرام میں تحریک انصاف کے سینئررہنما ندیم افضل چن نے مولانا فضل الرحمان کے جہاد شرعی کے فتوی پر کہا ہے کہ اس ملک میں بڑے بڑے مولویوں نے عورت کی حکمرانی کیخلاف بھی بڑے فتوے دیے ہیں ، آج وہی ایک عورت لیڈرکیساتھ کھڑے ہو کر جلسے بھی کر رہے ہیں ،ایسے فتویٰ کی کوئی حقیقت نہیں ہوتی ۔ ندیم افضل چن کا کہنا تھا کہ میں سمجھتا ہوں کہ سیاست کو مذہبی لبادہ پہنانے کی کوشش بھی گناہ کبیرہ ہے ، اور پھر مذہب کی آڑ میں آپ لوگوں کو اکسائیں ، سٹوْڈنٹ کو

اکسائیں ، یا پھر کسی فرقہ واریت کی طرف جائیں ۔ انہوں نے کہا ہے کہ جہاد دراصل ریاست کا کام ہے ، یہ کسی ایک بندے یا پھر سیاسی جماعت کا کام نہیں ہے ، آپ نے کرنا ہے تو پھر اسے پولیٹکل جدو جہد کا نام دیں ، آپ سیاست کریں ، نعرے لگائیں لیکن کسی آئین اور دائرے کے اندر رہ کر یہ سب کریں ۔ ان مزید کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمان کی فریسٹیشن اس لیول پر پہنچ گئی ہے مجھے نہیں یقین تھا کہ وہ اس حد تک جائیں گے انہوںنے بہاولپور جلسے میں اور بھی قابل اعتراض باتیں کی ہیں ، ذاتیات پر حملے کیے، میرے خیال میں سیاست کو سیاست کی حد تک رہنے دیں اور آپ اپنے نظریات کا پرچار ضرور کریں ۔

Leave a Reply

%d bloggers like this: