نواز شریف کی بھارتی اتاشی سے ملاقات کی خبر کا ڈراپ سین ۔۔۔ تصویر میں جس شخص کے ساتھ نواز شریف چہل قدمی کر رہے ہیں ، کون ہے؟ ہوش اڑا دینے والی تفصیلات سامنے آ گئیں

لندن(ویب ڈیسک) نواز شریف پر لندن میں بھارتی اتاشی سے ملنے کے دعوے غلط ثابت ہوگئے۔ تفصیلات کے مطابق ٹوئٹر پر شیئر ایک پیغام میں پی ٹی آئی کے کارکن نے ایک تصویر کے ساتھ لکھا تھا کہ نواز شریف بھارت کے اتاشی کے ساتھ گھوم رہے ہیں جس نے بھارت کے نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر اجیت کمار دوال کے


کہنے پر نواز شریف سے ملاقات کی ہے۔نوجوان نے لکھا کہ‘میں اس بات کی تصدیق کرتا ہوں کہ نواز شریف نے بھارت کے نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر اجیت دوال کے بھیجے گئے تین رکنی وفد سے ملاقات کی ہے۔ جن میں بھارت کے ملٹری اتاشی بھی شامل تھے۔ یہ ملاقات پارک لین پر واقع فور سیزن ہوٹل میں ہوئی اور میرے پاس اس کے تمام شواہد موجود ہیں۔’ لیکن اس شخص کی خبر اس وقت جھوٹی ثابت ہوئی جب اس تصویر میں موجود شخص سامنے آ گیا۔نواز شریف کے ساتھ موجود شخص لندن میں پاکستانی نجی ٹی وی چینل کا بیورو چیف تھا۔ صحافی سید کوثر کاظمی نے اس ٹوئٹ پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے لکھا کہ ‘پی ڈی ایم میٹنگ کے بعد میاں نواز شریف کے ہمراہ ہائیڈ پارک میں چہل قدمی کا موقع ملا۔ موجودہ ملکی حالات، میاں صاب کے نظریات اور پی ڈی ایم کے حوالے سے تفصیلی گفتگو ہوئی۔ اس کے ساتھ ہی صحافی نے پی ٹی آئی کارکن کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ‘میرا نام کوثر کاظمی ہے۔میں بھارت کا ملٹری اتاشی نہیں بلکہ ایک صحافی ہوں اور مجھے کسی سے بھی پاکستانی ہونے کا سرٹیفکیٹ نہیں چاہیے۔ میں آپ کے خلاف لندن کی عدالت میں قانونی کارروائی کروں گا۔ صحافی کی جانب سے کارروائی کے اعلان کے بعد صہیب ثاقب نامی ٹوئٹر صارف نے اپنا ٹوئٹ بھی ڈیلیٹ کردیا اور اب اس کے اکاؤنٹ سے بھی کسی قسم کا جواب نہیں آیا۔ واضح رہے کہ جب سے نواز شریف نے حکومتی اداروں کے خلاف تقریر کی ہے پی ٹی آئی کے رہنماؤں اور کارکنان کی جانب سے نواز شریف سمیت اپوزیشن رہنماؤں کو بھارتی ایجنٹ قرار دیا جا رہا ہے۔







%d bloggers like this: