وفاق المدارس کا نئے ایکٹ کے خلاف بڑے احتجاج کا اعلان

وفاقی سطح پر مدارس کے معاملات کو دیکھنے والی تنظیم وفاق المدارس کی مجلس شوریٰ نے منگل کے روز اعلان کیا کہ وقف املاک سے متعلق ترمیمی قوانین کو مدارس کی آزادی کے خلاف قرار دیا۔ اس حوالے سے وفاق المدارس نے 26 جنوری کو بڑے احتجاج کا اعلان کر دیا۔

وفاق المدارس کے ناظم مولانا قاضی عبدالرشید نے حکومت سے وقف املاک ایکٹ میں ترمیم کو واپس لینے کا مطالبہ کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ وقف املاک ایکٹ میں کی جانے والی ترامیم مساجد اور مدارس کی آزادی کو پامال کر رہی ہیں۔

فائنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) اور دیگر طاقتوں کے کہنے پر مدارس اور مساجد کی آزادی پر قدغن لگائی جا رہی ہے۔

مدارس کے وفاقی ادارہ کے منتظم کا کہنا تھا کہ مساجد اور مدارس کے تحفظ کے لئے تحریک ایک طویل عرصے سے اس ایکٹ کے خلاف سراپا احتجاج ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت نے ایکٹ میں نئی ترامیم کو واپس نہیں لیا تو وہ تحریک کا دوسرا مرحلہ شروع کردیں گے۔

نئے قوانین کے مطابق مدارس اور مساجد کے لیے ضروی ہے کہ وہ اپنے ذرائع آمدن اور چندہ دینے والوں کی شناخت ظاہر کریں، جس کے خلاف مولانا قاضی عبدالرشید نے کہا کہ اس ایکٹ کے خلاف 26 جنوری کو اسلام آباد میں ایک زبردست احتجاج کیا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ مدارس کے عطیہ دہندگان سے پوچھ گچھ نہیں کی جانی چاہئے کیونکہ یہ ان کو ہراساں کرنے کے مترادف ہے۔ قاضی عبدالرشید نے واضح کیا کہ مدارس کی اخراجات کی تفصیلات دینے کے لئے تیار ہیں لیکن بینکوں میں اکاؤنٹس نہیں کھولے جا سکتے۔

The post وفاق المدارس کا نئے ایکٹ کے خلاف بڑے احتجاج کا اعلان appeared first on Siasat.pk Urdu News – Latest Pakistani News around the clock.

%d bloggers like this: